kitaab ghar ka logo






Don't Like Unicode ?  Read in Nastaleeq from Image Pages or Download the PDF File

 

Kitaabghar Blog:
Kitaabghar launched a Blog for discussion of urdu books available online on kitaabghar.com or any other website. Readers can also share views and reviews of books of their choice and promote their favourite writers. This is not limited to urdu books.



توہین رسالت: غیرت ایمانی کی آزمائش

 

فکری پسماندگی کا شکار یورپی میڈیا


 

 

یورپ کےنامور مفکر اور نابغہ‘ روزگار دانشور Jaques Rousseu اور Jhon Loke کی روحیں یقینا اس وقت تڑپ کر رہ گئی ہوں گی جب حال ہی میں ایک یورپی اخبار نےان مفکروں کےپیش کیےہوئےاخلاقی نظریات کےبالکل برعکس مسلم امہ کی اعلیٰ ترین آفاقیت کےواحد مرکز ومحور اور دنیا کی ہدایت ورہنمائی کیلئےتشریف لانےوالےآخری رسول برحق کی شان میں گستاخی کی جسار ت کا ارتکاب کیا اور عالم اسلام کو ذہنی زک پہنچانےکی نیت سےاپنی انتہاءکو چھونےوالی فکری پسماندگی کا مظاہرہ کیا‘ یہاں ہم صرف ”روسو“ کی بات کریں گی‘ کون نہیں جانتا کہ جینوا میں 1712ءمیں جنم لینےوالےاس عظیم اور نامور یورپی مفکر ودانشور کی زندگی میں اکتوبر 1749ءمیں ایک ایسا نیا موڑ آیا تھا جب اس نےانسانی اخلاقی قدروں کےتحفظ کا علم بلند کرنا ضروری سمجھا اور اپنےننگےمعاشرےکی اخلاقی
بےراہ رویوں کو روکنےاور لگام دینےکیلئےعملی طور پر ایک اچھوتا مکالمہ تحریر کیا جس کا عنوان تھا ”کیا سائنس اور فنون لطیفہ اخلاقیات کو برباد کرنےمیں اپنا کردار ادا کرتی ہی؟“ اپنےاس مضمون میں اس نےیہ ثابت کر دیا ہےکہ ”اخلاقیات“ کی فطری عظمت نےسائنس اور فنون لطیفہ کو بےنام ونشان کر دیا ہے۔ اس مغربی مفکر ”روسو“ کےبارےمیں علم رکھنےوالوں کو معلوم ہو گا کہ روسو نےاپنی تمام زندگی ہنگامہ خیزیوں اور آوارہ گردی میں بسر کی‘ تاہم اس کےبارےمیں یہ بھی ایک حقیقت ہےکہ اس نےاپنی اس آوارہ مزاجی اور غیرمستقل مزاجی کےہوتےہوئےبھی اپنی کئی اہم تحریروں میں مثلاً The Origin Inequality میں ریاست کےعوام کی معصومیت کی تعریف اور ”زوال پذیر یورپی سوسائٹی“ پر زبردست تنقید کی تھی‘ اس یورپی مفکر کو اگر اسی کےاپنےپیش کیےہوئےمضامین‘ کتب اور فلسفہ کی روشنی میں جدید یورپ کا ”اخلاقی اور اصلاحی علمبردار“ کہا جائےتو شاید یہ بات بےجا نہ ہو گی‘ اور آج جب ہم یورپ میں حد سےبڑھتی ہوئی اخلاقی بےراہ رویوں کا یہ سیل رواں دیکھتےہیں تو ہمیں یہ ماننا پڑےگا کہ آج کےیورپ نے”سائنس اور فنون لطیفہ“ کو تو اپنےگلےسےلگا رکھا ہےا ور معاشرتی اخلاقیات کی باگیں اس کےہاتھوں سےتقریباً چھوٹ چکی ہیں‘ یہاں ہم پورےیورپ کی اخلاقی انحطاط پذیری پر بات کرنےکی بجائےکیوں نہ صرف ڈنمارک کی بات کریں جو آج کل پوری مسلم دنیا میں نفرت کی سنگین علامت بن چکا ہی۔ شمالی یورپ کےملک ”ڈنمارک“ کی شہرت کیا ہی؟ جہاں پر معاشرتی اخلاقی باختگی کو قانونی اور سماجی تحفظ حاصل ہی‘ جس ملک میں انسانی اخلاقیات تو کجا‘ قانونی ولدیت کا تصور تک نام کو نہیں اسی ملک سےشائع ہونےوالےایک اخبار نے”ذرائع ابلاغ کی آزادی“ کےنام پر جہاں دنیا کی ڈیڑھ ارب سےزائد مسلم آبادی کےانسانی اور مذہبی حقوق کو چیلنج کیا وہاں اس نےذرائع ابلاغ کی بنیادی آزادی کےاس ”عالمی تصور“ کی بھی دھجیاںبکھیر کر رکھ دیں جس انسان دوست تصورات کی تعلیمات ”روسو او رجان لاک“ جیسےبڑےفلسفیوں نےان کیلئےمتعین کی تھیں‘ یہ بات بڑی عجیب سےمعلوم ہوتی ہےکہ ویسےتو مغرب کےیہ لوگ جو اپنی عام زندگی میں ”احساسات“ معاشرتی قدروں کےحوالےسےاپنےروزمرہ کےافعال کےاظہار کےذریعےدنیا کی دوسری ترقی پذیر قوموں پر یہ ثابت کرنےمیں اپنا پورا زور صرف کر دیتےہیں کہ انسانی احساسات وجذبات کا احترام کرنےکا جتنا سلیقہ انہیں آتا ہےدنیا کی دیگر غیرمغربی قوموں میں نہ تو ان جیسا یہ سلیقہ ہی‘ اور نہ ہی ان کی طرح کےیہ طور طریقےان قوموں میں رائج ہیں متعصبانہ تشہیری مہم کےطوفان بدتمیزی کےنتیجےمیں ایک ایسےملک کےپرنٹ میڈیا کےذریعےمسلمانوں کےپیغمبر ختمی المرتبت کی شان والہصفات پر ایک ایسےگستاخانہ خاکےکےذریعےتشہیری حملہ کیا گیا ہےجس گستاخانہ خاکےمیں اس انتہائی بدبخت اور لعنتی کارٹونسٹ نےیہ ثابت کرنےکی ناکام کوشش کی ہےکہ (خدانخواستہ) اسلام کا آفاقی پیغام امن وسلامتی کی بجائےمار ڈھار اور جنگ وقتال کا پیغام ہی“۔

 

Go to Page:

*    *    *

tohin-e-risalat, sher angaiz mawad ki ashat, izhar ki azadi ya sher angezi, panja-e-yahood or europe, yahudioN ki sharartain, sazish ke muharrikat, maghrib ki islam mukhalifat, holocaust ka inkar, denark ka khaka, tahziboN ka tasadam, salibi jangoN ka naya silsila, shatim rasool ki saza or muafi, denmark ka boycott, jang, war, pyena round table conference, salahud din ayyubi, talash-e-aman, naqli qurran ki taqseem, pur tashaddud ahtajaj ke muashi muzimmarat, fikri pasmandgi ka shikar europian media

 

Download the PDF version for Offline Reading.(Downloads
(Visit DownloadArea)
)

(use right mouse button and choose "save target as" OR "save link as")

A PDF Reader Software (Acrobat OR Foxit PDF Reader) is needed for view and read these Digital PDF E-Books.

Click on the image below to download Adobe Acrobat Reader 5.0




Jannat Kay Pattay A Socio Romantic Urdu Novel by Women Digest Writer & Novelist Nemrah Ahmed Tum Akhri Jazeera Ho Social Romantic Novel by Amna Riaz Lards Spy Action Adventure Imran Series Novel by Mazhar Kaleem MA Tum Ho Mera Asman Urdu Romantic Novel by Shama Hafeez Socio Romantic Urdu Novel Ayada e Jaan Guzarishat by Ushna Kausar Sardar

[ Link Us ]      [ Contact Us ]      [ FAQs ]      [ Home ]      [ Forum ]      [ Search ]      [ About Us ]


Site Designed in Grey Scale (B & W Theme)